میری وہ گڑیا نہ رہی

بچپن میں میری اغوش میں ایک خوبصورت سی گڑیا ہوا کرتی تھِی وہ بھی میری امی کی ہاتھ کا بنا ہوا۔ ماں نے کالے رنگ کے ریشمی دھاگوں سےاْس کے بہت پیارے بال بناے تھے۔۔۔۔ میں روزصبح اٹھ کر اْس کے کپڑے بدلتی اور بال گنگی کیا کرتی تھی ۔۔۔۔بچپن کی بہت ساری خواہشوں میں سے ایک خواہیش یہ بھی تھی کہ کاش میری گڑیا بول پاتی تو میں اْس سے اور وہ مجھ سے اپنے دل کی ساری باتیں کرتی ۔۔۔۔۔۔۔ اْس ادھورے خواہش کی تکمیل میں ،میں اپنی گڑیا سے ڈھیروں ساری باتیں کیا کرتی تھی۔۔۔۔ کبھی اْس کے کپڑے بدلتے وقت توکبھی اْس کے بال کنگی کرتے ہوے یہاں تک کہ سوتے وقت بھی اْس سے یک طرفہ ڈھیروں ساری باتیں کرکے اْس سے اپنی گود میں لیے سو جاتی تھی۔۔۔۔۔۔ یہ سلسلہ ہونہی چلتارہا۔۔۔۔

مگر ایک دن کیا ہوا کہ جب میں سکول سے گھر پہنچی تومیری گڑیا اپنی جگہ پرنہیں تھی کسی نے چورا لی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ اْس لمحے کی تکلیف اور انسو اج بھی مجھے یاد ہیں میں اج بھی نہیں بھولی کہ اپنی گڑیا کے کھو جانے کےغم میں۔۔۔۔ میں نے دودن تک کھانہ بھی نہیں کھایا تھا ۔۔۔حالانکہ اْس کے اگلے ہی دن امی نے دوسری گڑیا بنا کردی مگر میں خوش نہیں تھی کیوںکہ۔۔۔۔۔۔میری وہ گڑیا نہ رہی ۔۔۔۔۔۔انسانی زندگی کے ایسے بہت قیمتی احساسات اسی طرح انسان کے لا شعورمیں دفن ہوجاتے ہیں اورانسان بھی وقتی طور پرانہیں لاشعور میں محفوظ کردیتاہے مگر زندگی کے کسی بھی موڑ پر اْس کے ہوبہو کوئی واقعہ اْس کے سامنے رونما ہوجاے تو لاشعور اْس دفن واقعے کو شعور کے خانوں میں اس غرص سے دکھیل دیتا ہے کہ ایسا واقعہ تو پہلے بھی ہوا تھآ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہی کچھ اج میرے ساتھ بھی ہوا ۔۔۔۔جب میں نے فاتحے کے لیے ہاتھ اٹھآ تے ہوےبولا ماں جی ۔۔۔۔۔مجھے اپ کی بچی کی اِس درد ناک موت یعنی خودکشی کا بہت افسوس ہوا۔۔۔ اللہ تعالی اْسے بخشے۔۔۔۔۔یہ سب کچھ سن کر وہ بوڑھی بچاری ماں زارو قطاررو چیخ کر رورونے لگی کہ بیٹی میری دینا برباد ہوگئی۔۔میری دینا اجڑ گئی۔۔۔میری وہ گڑیا نہ رہی ۔۔۔۔میری وہ گڑیا نہ رہی۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچانک اْس کے وہ الفاظ میرے شعورکے خانون سے ٹکراتے ہوَے لاشعور کے خانوں میں جھانکنے لگے ۔

تب اْسی لمحے مجھےمیری بچپن کی کھوئی ہوِئی وہ گڑیا یاد اگئی اوریوں میں نے اس کا درد اپنے اوپرطاری کیا ۔۔۔۔گویا کہ وہ میرا اپنا ہی درد ہو ۔۔۔۔۔۔۔ اور ساتھ ہی میرے زہین مین یہ خیال بھی جھانکنے لگا کہ کاش ہمارے معاشرے میں بچیان میری اْس گڑیا کی طرح بے زبان نہ ہوتی ۔۔۔۔۔۔کاش ہمارے معاشرے کی بچیاں کسی کو کچھ بتا سکتی ۔۔۔ کاش اپنا درد اپنی تکلیف کسی کے سامنے بیان کر پاتی ۔۔۔۔کا ش کوئی استاد کوئی ماں/ باپ کوئی دوست سہیلی یا کوئی رشتہ دار کوئی توان کے سننے والے ہوتے تواج میری اْس بے زبان گڑیا کی طرح اِس ماں کی بے زبان گڑیا بھی یوں کھونہ جاتی ۔۔۔۔۔۔۔۔کاش

Zeal Policy

زیل نیوز میں شائع مضامین اور کمنٹس سے ادارے کا متفق ہونا ضروری نہیں
126450cookie-checkمیری وہ گڑیا نہ رہی

کالم نگار/رپورٹر : فریدہ سلطانہ فری

Share This